دنیا کی سب سے بڑی حکمران جماعت!!! کس طرح 50 ارکان کی جماعت 95 ملین تک جا پہنچی؟ ترقی کا راز جان کر آپ دنگ رہ جائیں

لاہور: (ویب ڈیسک) چینی سفیر نونگ رونگ اپنی تحریر میں لکھتے ہیں کہ” چین کی کمیونسٹ پارٹی (سی پی سی) عالمی اثر و رسوخ کے ساتھ دنیا کی سب سے بڑی حکمران جماعت بن گئی ہے۔ تصور کریں کہ یہ کس طرح 50 ارکان کی جماعت سے آج 95 ملین سے زیادہ تک ترقی کر رہی ہے۔ جو کوئی بھی راز جاننا چاہتا ہے، اسے 19ویں سی پی سی کی مرکزی کمیٹی کے چھٹے مکمل اجلاس کا بغور مطالعہ کرنا چاہیے۔

جس میں چین کی کمیونسٹ پارٹی کی مرکزی کمیٹی کی بڑی کامیابیوں اور پارٹی کی صد سالہ جدوجہد کے تاریخی تجربے سے متعلق قرارداد منظور کی گئی۔ سی پی سی کی کامیابی کی چند کنجیاں یہاں دی گئی ہیں۔ سب سے پہلے پارٹی کی قیادت کو برقرار رکھنا اور پارٹی کے اتحاد اور مرکزیت کو یقینی بنانا ہے۔ سی پی سی چینی خصوصیات کے ساتھ سوشلزم کی بنیادی قوت ہے۔ چین میں 56 نسلی گروہ ہیں اور آبادی 1.4 ارب ہے۔ اگر سی پی سی کی مرکزی کمیٹی کے پاس کور نہ ہو اور پوری پارٹی کے پاس کور نہ ہو تو اسے توڑنا آسان ہو گا اور کچھ نہیں کیا جا سکتا۔ اس مکمل اجلاس میں سی پی سی نے کامریڈ شی جن پنگ کو پارٹی کی مرکزی کمیٹی اور پوری پارٹی کی بنیادی حیثیت کے طور پر قائم کیا اور نئے دور کے لیے چینی خصوصیات کے ساتھ سوشلزم پر شی جن پنگ کی فکر کی رہنمائی کا مقام قائم کیا۔ سی پی سی کے ساتھ ساتھ چینی عوام چینی قوم کی عظیم تر موثریت کے لیے مزید متحد ہوں گے۔ دوسرا یہ کہ ملک کے قومی حالات کے مطابق صحیح ترقی کی راہ پر گامزن رہنا ہے۔ سمت مستقبل کا تعین کرتی ہے اور سڑک تقدیر کا تعین کرتی ہے۔ ایک صدی کی جدوجہد سے سی پی سی نے چین کے قومی حالات کی بنیاد پر پورے ملک کے عوام کو متحد اور ان کی قیادت کی اور چینی خصوصیات کے ساتھ سوشلزم کے راستے پر چڑھا دیا جو چین کی اقتصادی اور سماجی ترقی کے مطابق ہے۔ اگرچہ اس عمل میں چیلنجز اور اتار چڑھاؤ موجود ہیں مجموعی طور پر درست سمت میں آگے بڑھنا ہمارے لیے ہمیشہ ثابت قدم رہا ہے۔

تیسرا یہ ہے کہ عوام پر مبنی راستے پر چلیں اور عوام کو ملک کے مالک بننے دیں۔ گزشتہ دسمبر میں چین نے ’چین میں جمہوریت‘ وائٹ پیپر جاری کیا، جس نے پورے عمل میں عوامی جمہوریت کے تصور کو متعارف کرایا۔ جمہوری عمل کے تمام شعبوں جیسے مشاورت، فیصلہ سازی، انتظام اور نگرانی میں اس بات کو یقینی بنانے کے لیے نظام اور طریقہ کار کا ایک مجموعہ ہے کہ حتمی فیصلہ لوگوں کی مرضی اور لوگوں کے فائدے کے لیے ہو۔ ’جوتے فٹ ہیں یا نہیں، صرف آپ جانتے ہیں‘۔ کوئی ملک جمہوری ہے یا نہیں، اس کا فیصلہ عوام کو کرنا ہے۔ اور مجھے یہ کہتے ہوئے فخر ہے کہ ہمارا چین کی حالت کے مطابق ہے اور واقعی کام کرتا ہے۔ چوتھا ایک عالمی وژن کو برقرار رکھنا اور بنی نوع انسان کے لیے مشترکہ مستقبل کی کمیونٹی بنانے کی کوشش کرنا ہے۔ ایک پارٹی کو ہمیشہ اعلیٰ اہداف کے ساتھ خود کو متحرک کرنا چاہئے جو مستقل محرک قوت فراہم کریں۔ سی پی سی نہ صرف چینی عوام کے لیے خوشی اور چینی قوم کے لیے نئی زندگی کا خواہاں ہے بلکہ بنی نوع انسان کی ترقی اور دنیا کے لیے عظیم اتحاد کا خواہاں ہے۔ اس مقصد کے لیے صدر شی جن پنگ نے بنی نوع انسان کے مشترکہ مستقبل کے ساتھ ایک کمیونٹی کی تعمیر کا تصور پیش کیا۔ جیسا کہ کووڈ 19 وبائی مرض سے نمٹنے میں دیکھا گیا ہے کہ چین نے سب سے بڑا عالمی ہنگامی انسانی آپریشن شروع کیااور بہت سے ممالک خاص طور پر پاکستان سمیت ترقی پذیر ممالککو مادی امداد، طبی امداد، ویکسین کی امداد اور تعاون فراہم کیا۔ جیسا کہ دنیا میں ایک صدی میں نظر نہ آنے والی بنیادی تبدیلیوں کا سامنا کرتے ہوئے صدر شی جن پنگ نے گزشتہ اکتوبر میں وزیر اعظم عمران خان کے ساتھ ٹیلی فونک گفتگو کے دوران کہا تھا چین اور پاکستان کو مزید مضبوطی سے ایک دوسرے کے ساتھ کھڑے ہونا چاہیے اور اسٹریٹجک باہمی اعتماد کو مسلسل مضبوط کرنا چاہیے۔ چین ترقی کی راہ تلاش کرنے میں پاکستان کی حمایت کرتا ہے جو اس کے اپنے قومی حالات کے مطابق ہو اور گورننس میں سی پی سی کے تجربے کو پاکستان کے ساتھ شیئر کرنے کے لیے تیار ہے۔ اگلے ماہ کے اوائل میں وزیراعظم عمران خان بیجنگ اولمپکس 2022 کی افتتاحی تقریب میں شرکت کے لیے چین جائیں گے اور دو طرفہ تعلقات پر بات چیت کریں گے۔ دونوں ممالک کے رہنما نئے سال اور اس سے آگے کے لیے چین پاکستان تعلقات کی مستقبل کی ترقی کا راستہ طے کرنے کے لیے آمنے سامنے ملاقات کریں گے۔ مجھے اس دورے کی کامیابی پر پورا بھروسہ ہے اور پختہ یقین ہے کہ چین کی ترقی کے ساتھ ساتھ سی پی سی کا تجربہ ہمارے فولادی دوست کی اعلیٰ معیار کی ترقی کے نئے مواقع لائے گا۔ آئیے اس مقصد کے لیے ہاتھ ملا کر کام کریں اور نئے دور کے لیے اپنی ہمہ موسمی اسٹریٹجک کوآپریٹو شراکت داری کے مفہوم کو تقویت دیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.