کل سپریم کورٹ آف پاکستان میں بلاول بھٹو کا بولا ہوا وہ جملہ جسکی چیف جسٹس عمر عطا بندیال بھی تعریف کرنے پر مجبور ہو گئے

اسلام آباد (ویب ڈیسک )چیف جسٹس عمر عطا بندیال نے کل از خود نوٹس کی سماعت کے دوران بلاول بھٹو کی تعریف کرتے ہوئے کہا کہ آپ کا شکریہ آپ نے ٹو دی پوائنٹ بات کی ، آپ واحد ہیں جن کے چہرے پر مسکراہٹ تھی ۔ کل سپریم کورٹ میں سپیکر رولنگ کے خلاف از خود نوٹس کی

سماعت کے دوران بلاول بھٹو زرداری نے روسٹرم پر آکر اپنے بیان میں کہا کہ الیکشن ریفارمز کے بعد ہونے چاہئیں ، اگر اسی طرح رہا تو یہ گزشتہ الیکشن کی طرح متنازع رہے گا ، ڈپٹی سپیکر کی غیر قانونی رولنگ نے جمہوریت پر سوال اٹھا دیا ۔ چیف جسٹس نے بلاول بھٹو کی تعریف کرتے ہوئے کہا کہ بہت شکریہ آپ ٹو دی پوائنٹ رہے اور مسکراہٹ کے ساتھ بات کی ، آپ نے بہت زبردست بات کی ۔ چیف جسٹس نے بلاول بھٹو سے مکالمہ کرتے ہوئے کہا کہ آپ واحد شخص ہیں جن کے چہرے پر مسکراہٹ تھی ۔ چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ ہمیں آئین پر سختی سے عمل کرتے ہوئے فیصلہ جاری کرنے دیں، معلوم ہے بلاول بھٹو زرداری کی تین نسلوں نے جمہوریت کی بقاءکیلئے قربانی دی ۔ چیف جسٹس عمر عطا بندیال کی سربراہی میں پانچ رکنی لارجر بینچ نے سپیکر رولنگ کے خلاف از خود نوٹس کیس کی سماعت کی ۔ پاکستان پیپلزپارٹی ، مسلم لیگ (ن) ، صدر مملکت ، وزیر اعظم ، سپیکر و ڈپٹی سپیکر کے وکلاء اور اٹارنی جنرل نے اپنے دلائل مکمل کر لئے جس کے بعد عدالت نے فیصلہ محفوظ کرلیا جو کہ شام ساڑھے سات بجے سنایا جائے گا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.