گزشتہ حکومت میں آئے وہ بحران جن کی تحقیقات کا فیصلہ کرلیا گیا

لاہور (ویب ڈیسک) وفاقی حکومت نے گزشتہ 4 سال میں پیدا ہونے والے گندم، آٹا بحرانوں کی وجوہات اور ذمے داروں کے تعین کیلیے تحقیقات کروانے کا فیصلہ کیا ہے۔ گزشتہ 2سال کے دوران سرکاری طور پر امپورٹ کی جانے والی 45 لاکھ ٹن کے لگ بھگ

گندم کے ٹینڈرز کے طریقہ کار اور موصول ہونے والی پیشکشوں کا بھی جائزہ لیا جائے گا جبکہ آئندہ چند روز میں تشکیل پانے والی پنجاب حکومت کو بھی ہدایت کی جائے گی کہ وہ محکمہ خوراک میں چار سال میں ہونے والے متنازع معاملات اور سنگین شکایات کا بغور جائزہ لے۔ ایکسپریس نیوز کے مطابق وزیراعظم میاں شہباز شریف اور ان کے قریبی ساتھیوں نے ان شکایات اور اطلاعات کا سنجیدہ نوٹس لیا ہے جس میں کہا جارہا ہے کہ گزشتہ دو برس میں سرکاری سطح پر امپورٹ کی جانے والی لاکھوں ٹن گندم میں مبینہ طور پر سنگین بے قاعدگیاں ہوئیں اور کک بیکس و کمیشن لی گئی ہے۔ مبینہ طور پر کم قیمت والے متعدد ٹینڈرز منسوخ کر کے مہنگے ٹینڈرز کو منظور کیا گیا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.