وہ مکمل منصوبہ اور طریقہ کار جو پاکستان کو ترقی اور خوشحالی کی راہ پر گامزن کر سکتا ہے ۔۔۔۔ سابق گورنر سٹیٹ بنک ڈاکٹر عشرت حسین کی خصوصی تحریر

لاہور (ویب ڈیسک) سابق گورنر سٹیٹ بنک آف پاکستان ڈاکٹر عشرت حسین اپنے ایک کالم میں لکھتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔پاکستان میں طریقہ تدریس اساتذہ کے حوالے سے لین دین کی شکل اختیار کر چکا ہے۔ جماعت میں ترقی،اسناد، سرٹیفکیٹس اور ڈگریاں حاصل کرنے اور نوکریوں کے حصول کی تگ و دو کے سوا طلبہ

کے سامنے اور کوئی مقصد نہیں ہے۔ تعلیم کی اس شکل کو تبدیل کرتے ہوئے اس کا بنیادی مقصد اوائل عمری میں ہی تجسس، تنقیدی سوچ، تجزیاتی صلاحیت پیدا کرنا اور سوال اٹھانا ہونا چاہیے۔ موجودہ نظام میں جہاں والدین چھوٹے بچوں کے سوال پوچھنے کی حوصلہ شکنی کرتے ہیں تو دوسری طرف مشینی انداز میں پڑھانے والے اساتذہ اور کلاس روم میں بیٹھے غیر فعال طلبہ اساتذہ کے لیکچرز کے نوٹس سے لیے گئے مواد کو زبانی یاد کرلیتے ہیں۔ اس اندھا دھند یاد کیے گئے مواد کے منتخب شدہ حصوں کو امتحانات میں پوچھے گئے سوالات کے جواب میں من و عن لکھ دیا جاتا ہے۔ اس کی بنیاد پر گریڈ اور نمبر حاصل ہوتے ہیں اور تعلیمی مدارج آگے بڑھتے ہیں۔ ہمارے ہاں فی الحال یہی عمل تعلیمی سرگرمی کہلاتا ہے۔ہمارے معاشی جمود کی وجہ یہی نظام تعلیم ہے جسے مکمل تحلیل کرنا ضروری ہوچکا۔ مستقبل کے چیلنجوں سے نمٹنے کے لیے نئے نظام میں موافقت، تجسس، تخلیقی صلاحیت کو بیدار کرتے ہوئے غیر یقینی صورتحال سے پرسکون طریقے سے نمٹنے اور مسائل حل کرنے کی مہارتوں کی حوصلہ افزائی کرنا ہوگی۔ اس کے لیے انٹرایکٹو لرننگ ٹیکنالوجی ٹولز کی ضرورت ہوگی جو نوجوان ذہنوں کی حوصلہ افزائی کرے اور اُنہیں مستقبل کی ملازمتوں کے لیے تیار کرے۔تکنیکی مہارتیں لبرل آرٹس اور سماجی علوم کے ساتھ ہم آہنگ ہونی چاہئیں کیوں کہ مختلف علوم کے روابط سے وجود میں آنے والی ٹیمیں اور ان کا افقی تعاون پیچیدہ سماجی اور معاشی مسائل کو حل کرنے میں مدد دیتا ہے۔اسکولوں کو لوکل ایریا نیٹ ورکس، تیز رفتار فکسڈ لائنز وائرلیس اور

وائر بیسڈ براڈ بینڈ انٹرنیٹ کنکشن، کلاؤڈ کمپیوٹنگ، لرننگ مینجمنٹ سسٹم اور تمام معاون انفراسٹرکچر بشمول آلات سے لیس کرنا ہوگا۔ ان سے طلبہ اپنے گھروں اور کلاس رومز میں آسانی سے رسائی حاصل کرسکتے ہیں۔ لیبارٹریز انٹرنیٹ کنیکٹیویٹی کے دستیاب آپشنز کا جائزہ لینے کے لیے پاکستان میں 33500 اسکولوں کے ورلڈ بینک کے سروے نے انکشاف کیا کہ جانچ کیے گئے علاقے میں صرف 9800 آپٹیکل فائبر نوڈ تھے۔ 2200 ایسے علاقے تھے جہاں وائس کالز کے لیے سیل فون سگنل بھی نہیں پہنچتے تھے۔ یونیورسل سروس فنڈز کو ثانوی شہروں اور دیہی علاقوں تک فور جی کنیکٹیویٹی کو بڑھانے، سروس کوریج کو پھیلانے، سروس فراہم کرنے والوں سے منسلک نئے سیل ٹاور قائم کرنے کے لیے استعمال کیا جانا چاہیے۔یہ سرمایہ کاری درمیانی اور طویل مدت میں معیشت کے لیے بہت فائدہ مند ثابت ہوگی۔ملک بھر کے لوئر اور ہائر سیکنڈری اسکولوں میں STEM مضامین میں اساتذہ کی بڑے پیمانے پر بھرتی کے لیے ان کی تربیت اور صلاحیتیں بڑھانے کی ضرورت ہوگی۔ موجودہ طریقہ کار کے برعکس، ان اساتذہ کا انتخاب علمی ریاضت، فکری بنیادوں اور طلبہ کے تخیل کو جلا بخشنے والی تدریسی موافقت کی بنیاد پر ہونا چاہیے۔ میں نے کراچی میں داؤد فاؤنڈیشن کے قائم کردہ سائنس میوزیم میں اسکول کے لڑکوں اور لڑکیوں کو انٹرایکٹو سیکھنے کے تجربات میں حصہ لیتے اور لطف اندوز ہوتے دیکھا ہے۔ سائنس اور ریاضی ان کے لیے بے کیف اور اکتا دینے والی مشق کی بجائے تفریحی سرگرمیاں بن گئے تھے۔ اس طرح کی تدریس انہیں بنیادی تصورات کو سمجھنے

اور بنیادی تفہیم کو فروغ دینے میں مدد کرسکتی ہے جو ان کے ذہنوں میں اس وقت تک زندہ رہے گی جب تک کہ نیا علم پرانے کی جگہ نہ لے لے۔نوجوان ذہنوں کو غلطیاں کرنے پر سرزنش کی بجائے غلطیوں سے سیکھنے کی ترغیب دی جانی چاہیے۔آزمائش اور غلطی سے جدت اور اختراع کا راستہ کھلتا ہے اور ناکامی کا خوف اختراع اور سیکھنے کے عمل کو روکتا ہے۔دوسرا شعبہ جس پر مکمل نظر ثانی کی ضرورت ہے وہ محققین اور ریسرچ فیکلٹی کے لیے ترغیبات پر مبنی فریم ورک ہے۔1970 اور 2016 کے درمیان، سٹینفورڈ کے ٹیکنالوجی لائسنسنگ کے دفتر نے 11,000 سے زیادہ ایجادات کی تخلیق سامنے آئی اور 3600 سے زیادہ کمپنیوں کے لائسنس جاری کیے جنہوں نے $1.7 بلین رائلٹی حاصل کی۔ ایم آئی ٹی فیکلٹی، سابق طلبہ، گریجویٹ اور پوسٹ گریجویٹس نے 2784 کمپنیاں قائم کی ہیں جن میں 42 یونی کارنز اور ڈراپ باکس، فائر آئی اور لنکڈ ان جیسی بڑی کمپنیاں شامل ہیں۔ بوسٹن میں روٹ 128 ان ہزاروں کمپنیوں سے بھرا ہوا ہے۔ پاکستان بھر کی تمام 220 یونیورسٹیوں کی فیکلٹی نے مل کر ایسی کتنی کمپنیاں قائم کی ہیں؟ ساختی مسائل اور غلط ترغیبات کی وجہ سے اب تک کا ریکارڈ انتہائی افسوس ناک ہے۔ فیکلٹی ممبران کو ان کے دانشورانہ سرمائے، ایجادات اور پیٹنٹ پر مالی منافع برقرار رکھنے کی اجازت ہونی چاہیے۔ یونیورسٹیوں میں مالی وسائل کی کمی کی وجہ سے تحقیقی لیبارٹریز اور ان کے پاس موجود مہنگے آلات کو دوسرے باہر کے محققین کو جمع اور شیئر کرنا چاہیے۔ ترقی کے معیار کو صرف اثر

فیکٹر جرنل پبلیکیشنز پر انحصار سے ہٹ کر اشاعتوں، پیٹنٹ اور ایجادات اور معیشت کو درپیش مسائل کو حل کرنے میں تعاون کے مجموعے پر منتقل ہونا چاہیے۔ مثال کے طور پر، ایک تحقیقی سائنسدان جو کیڑوں کے خلاف مزاحمت کرنے والی اعلیٰ پیداوار دینے والی قسم تیار کرنے کے قابل ہے جو کپاس کی اوسط قومی پیداوار کو مستقل بنیادوں پر نمایاں طور پر بڑھاتی ہے، اسے انعامات اور اعزازات، پروموشن، مراعات اور مراعات کی صورت میں دل کھول کر انعام دیا جانا چاہیے۔پاکستان کو عالمی جدت اور تیاری کے اشاریہ پر اپنی کم درجہ بندی سے ایک کثیر الجہتی خلل ڈالنے والی حکمت عملی کے ذریعے خود کو نکالنا ہوگا جو تعلیم کے موجودہ موڈ کو ختم کرتی ہے۔ بنیادی اجزامندرجہ ذیل ہیں (a) طلبہ کوشروع سے ہی اسکول کی سطح پر اسٹیم کے مضامین سے روشناس کرانا اور انہیں تفریحی اور پرجوش بنانا اور اس مقصد کے لیے بڑے پیمانے پر اساتذہ کی بھرتی اور تربیت کرنا (b) تحقیق اور ترقی میں سرمایہ کاری کرنا۔ پبلک سیکٹر، پرائیویٹ سیکٹر، ڈیفنس اور اکیڈمیاں اور ان کے درمیان قریبی تعاون کو فروغ دینا (c) غیر ملکی اسکالرز اور محققین کو مقامی محققین کے ساتھ مشترکہ پروجیکٹس میں داخل ہونے کی ترغیب دینا (d) یونیورسٹی فیکلٹی کے ترغیبی ڈھانچے کو بہتر بنانے کے لیے تاکہ وہ سیٹ کر سکیں۔ اپنے اپنے اسٹارٹ اپس شروع کریں اور اپنے دانشورانہ سرمائے سے منافع حاصل کریں (e) زیادہ سے زیادہ پاکستانیوں کو بیرون ملک اسکالرشپ پر بھیجیں اگر وہ اعلیٰ یونیورسٹیوں میں STEM کے شعبوں میں داخلہ حاصل کرنے کے قابل ہیں (f) لیبارٹریوں میں بھاری سرمایہ کاری کرنے کے لیے اسکولوں، کالجوں اور یونیورسٹیوں میں آئی سی ٹی کا بنیادی ڈھانچہ اور رابطہ قائم کرنا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.