50 برس میں پاکستانی روپے کی بے قدری کی انتہا، ڈالر کے مقابلے میں قدر 4100 فیصد کم ہوئی

لاہور(ویب ڈیسک) تحقیق سے پتہ چلتا ہے کہ 50 سال میں پاکستانی روپے کی قدر ڈالر کے مقابلے 4100 فیصد کم ہوئی جبکہ پڑوسی ملک بھارت کا روپیہ گزشتہ نصف صدی کے دوران صرف 898.59 فیصد تک نیچے آیا۔ تفصیلات کے مطابق تحقیق اور حساب ظاہر کرتے ہیں کہ طاقتور امریکی ڈالر کے مقابلے میں پاکستانی روپے کی مساوات 4100 فیصد سے

زیادہ خراب ہو گئی ہے جو ٹھیک 50 سال قبل مئی 1972 کو صرف 4.76 روپے تھی، جو 18 مئی 2022 کو 200 روپے تک پہنچ گئی جس کی وجہ سے ملک کی معاشی بدحالی بڑھ رہی ہے۔اس کے برعکس پڑوسی ملک بھارت میں ملک کا روپیہ گزشتہ نصف صدی کے دوران صرف 898.59 فیصد گرا ہے جو کہ مئی 1972 میں بھارتی روپے 7.57 سے 18 مئی 2022 کو 77.59 بھارتی روپے پر ہے۔شرح مبادلہ کسی بھی ملک کے میکرو اکنامک استحکام کے سب سے اہم ستونوں میں سے ایک ہے لیکن جس طرح سے بے لگام امریکی سرکاری کرنسی نوٹ (گرین بیک) نے کمزوروں کو متاثر کیا ہے اور کمزور پاکستانی روپیہ بلا نظیر ہے اور اب صورتحال ملک کے بیرونی قرضوں، درآمدی بل اور مالیاتی خسارے کے لیے خوفناک ہے۔کم از کم 28 مئی 1998 کے بعد سے روپیہ امریکی کرنسی کے مقابلے میں خزاں کے پتوں کی طرح وزن اور قدر کم کر رہا ہے جب ملک میں فاریکس اکاؤنٹس (46 روپے فی ڈالر پر) منجمد کر دیے گئے تھے اور ملک کو ہر طرح کی بین الاقوامی پابندیوں کا سامنا کرنا پڑا تھا۔ ڈالر کی بے لگام پرواز اور ذخیرہ اندوزی نے پھر معاشی حکمت عملیوں کو مانیٹری اور ایکسچینج ریٹ پالیسیوں کے تابع بنا دیا۔پیسے کو تنگ کرنے والے نظام سامنے آئے جس سے آج تک مہنگائی میں اضافہ، عوامی قرضوں میں اضافہ اور بے قابو اور بے لگام قرضوں کی فراہمی کے اخراجات کو راہ ملی۔ویسے جب سے سابق وزیراعظم عمران خان کو 10 اپریل 2022 کو باہر کیا گیا ہے روپے اور ڈالر کی مساوات صرف 38 دنوں میں 13.72 روپے یا 7.37 فیصد کم ہو کر 186.28 روپے سے 200 روپے تک پہنچ گئی ہے۔پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کی سابقہ حکومت کے 1333 دن کے دور میں، جس نے باضابطہ طور

پر 18 اگست 2018 کو اس وقت چارج سنبھالا تھا جب عمران خان نے ملک کے 22ویں وزیر اعظم کی حیثیت سے حلف اٹھایا تھا، امریکی ڈالر کے مقابلے پاکستانی روپے کی مساوات 50.23 فیصد کم ہو کر 124 روپے سے 186.28 روپے تک پہنچ گئی۔انسٹی ٹیوٹ آف بزنس ایڈمنسٹریشن (آئی بی اے) کراچی کی جانب سے پاکستان کی شرح مبادلہ کے نظاموں اور معیشت پر ان کے اثرات کے بارے میں 2-17 کی سابقہ بصیرت سے انکشاف ہوا کہ 1947 میں آزادی کے بعد پاکستان نے ایک فکسڈ ایکسچینج ریٹ کا نظام اپنایا۔روپیہ اسٹرلنگ سے منسلک تھا اور 1949 میں اسٹرلنگ کی قدر میں کمی کی گئی جس کے بعد بھارتی روپے کی قدر میں کمی ہوئی۔پاکستانی حکومت کو بھی کرنسی کی قدر میں کمی کے لیے دباؤ کا سامنا کرنا پڑا لیکن یہ دباؤ کے سامنے کھڑی رہی اور پاکستانی روپے کی قدر میں کمی نہیں کی جیسا کہ برآمدی آمدنی کافی محدود تھی اور قدر میں کمی سے نئی صنعتی معیشت کے لیے درکار مشینری اور سرمائے کے آلات کی درآمد زیادہ مہنگی ہو جاتی۔ریسرچ پیپر میں مزید کہا گیا ہے کہ فروری 1973 میں امریکی ڈالر کی قدر میں 10 فیصد کمی ہوئی جس کے نتیجے میں پاکستانی روپے کی قدر میں 10 فیصد تک 9.90 روپے فی ڈالر اضافہ ہوا اور 1982 میں منظم فلوٹ (کسی ملک کے پیسے کی قدر کو دوسرے ممالک کے پیسے کی قدر کے مطابق تبدیل کرنے کی اجازت ) کو اپنانے کے فیصلے تک یہ اس سطح پر قائم رہا۔1973-1982 تک مقررہ شرح مبادلہ کے نظام کے دوران قیمت کے فرق اور امریکی ڈالر اور دیگر بڑی کرنسیوں کی نقل و حرکت کے ساتھ حقیقی موثر شرح مبادلہ باہم مل کر منتقل ہو گئی۔مسلسل کم افراط زر کے فرق، دوسری بڑی کرنسیوں کے مقابلے میں امریکی ڈالر کی قدر میں کمی کے باعث 1976-1979 کے

دوران روپے نے حقیقی معنوں میں دوبارہ مسابقت حاصل کی۔1980 کی دہائی کے اوائل میں بڑی کرنسیوں کے مقابلے میں امریکی ڈالر کی قدر میں اضافے اور تجارتی شراکت داروں کے مقابلے میں زیادہ ملکی افراط زر کی وجہ سے حقیقی موثر شرح مبادلہ میں کافی حد تک اضافہ ہوا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.