بیرونی قوتوں کا پریشر یا کچھ اور؟ حکومت نے کس مجبوری کے تحت پٹرولیم قیمتوں میں اضافہ کیا؟ وزیرتوانائی نے حقیقت بتا دی

کراچی (ویب ڈیسک) وزیر توانائی سندھ امتیاز شیخ نےکہا ہے کہ حکومت نے انتہائی مجبوری میں پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافہ کیا ہے۔ وزیر توانائی سندھ امتیاز شیخ نے اپنے ایک بیان میں معاشی بحران کی تمام تر ذمہ داری سابقہ حکومت پرعائد کر دی، کہتے ہیں عمران خان نے جان بوجھ کر

فروری میں پٹرول کی قیمتوں کو منجمد کردیا تھا، عمران خان کو پتا چل چکا تھا کہ اپریل کے مہینے میں ان کے خلاف عدم اعتماد آرہی ہے۔ امتیاز شیخ نے کہا کہ سابق حکومت معیشت کو وینٹی لیٹر پر چھوڑ کر گئی ہے۔ موجودہ حکومت کے نزدیک سیاست نہیں ریاست مقدم ہے۔ امتیاز شیخ کا مزید کہنا تھا کہ عمران خان کی بچھائی گئی بارودی سرنگوں کو حکومت میں شامل تمام جماعتیں مل کر صاف کر رہی ہیں۔دوسری جانب ایک خبر کے مطابق چیئرمین پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) اور سابق وزیر اعظم عمران خان نے حکومت کو 6 روز میں انتخابات کی تاریخ کا اعلان کرنے کا الٹی میٹم دے دیا۔ عمران خان کی زیر قیادت گزشتہ روز صوابی سے شروع ہونے والا ’حقیقی آزادی لانگ مارچ‘ اسلام آباد میں ڈی چوک کے قریب پہنچا، جہاں جناح ایونیو پر کارکنوں سے خطاب کرتے ہوئے عمران خان نے کہا کہ امپورٹڈ حکومت کو پیغام ہے کہ 6 روز میں انتخابات کا اعلان کریں، 6 روز میں فیصلہ نہ کیا تو ساری قوم کو لے کر واپس اسلام آباد آؤں گا۔ کارکنان سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ میں آپ کی ہمت کو خراج تحسین پیش کرتا ہوں، میں 20 گھنٹے میں خیبرپختونخوا سے اسلام آباد پہنچا ہوں، میں نے دیکھا کہ میری قوم نے اپنے خوف پر قابو پالیا ہے۔انہوں نے کہا کہ ہماری حکومتیں جھوٹے کیسز اور گرفتاریوں سے ڈراتی تھیں، میں نے پہلی بار دیکھا کہ میری قوم ان سارے خوف سے آزاد ہوچکی ہے، جب تک قوم خوف سے آزاد نہ ہو تب تک اس سے آسانی سے غلامی کروائی جاسکتی ہے۔انہوں نے کہا کہ ہماری پارٹی کو ممی ڈیڈی کہتے تھے، میں نے سارے راستے

اپنے ساتھ ہر طرح کے لوگ دیکھے، انہوں نے آنسو گیس کا جس طرح مقابلہ کیا اس کی کوئی مثال نہیں ہے۔ان کا کہنا تھا کہ ہماری اس تحریک کو ناکام بنانے کی کوشش کی گئی لیکن میں اللہ کا شکر ادا کرتا ہوں کہ قوم آزادی کے لیے ہر قربانی دینے کے لیے تیار ہے۔سابق وزیر اعظم نے کہا کہ سپریم کورٹ کے ججوں پر ایک بڑی ذمہ داری ہے، دنیا میں ایسی کون سی جمہوریت ہے جہاں پرامن احتجاج کی اجازت نہیں دی جاتی اور مظاہرین کو آنسو گیس کی شیلنگ، پولیس کے چھاپوں اور گرفتاریوں کا سامنا کرنا پڑتا ہے؟انہوں نے کہا کہ میں آج اپنی عدلیہ اور سپریم کورٹ کو خراج تحسین پیش کرتا ہوں، ان کا شکریہ کہ حکومت کی جانب سے ہمارے کارکنان کی پکڑ دھکڑ کا انہوں نے نوٹس لیا۔عمران خان نے کہا کہ کیا جمہوریت میں اس طرح کے طریقے اپنائے جاتے ہیں، ایک ساتھی کو اٹک میں اور ایک کو دریائے راوی میں گرا کر شہید کیا گیا، 3 لوگوں کو کراچی میں شہید کیے جانے کی بھی اطلاعات ہیں، ہمارے ہزاروں کارکنوں کو گرفتار بھی کیا گیا۔انہوں نے سپریم کورٹ سے سوال کیا کہ ہم کون سا جرم کررہے تھے؟ 26 سال کی سیاست میں کب میں نے قانون توڑا؟ میں ہمیشہ اپنے جلسوں میں فیملیز کو بلاتا ہوں، آزای مارچ میں خواتین اور بچوں نے بھی شرکت کی ہے، میں اپنی خواتین کو سلیوٹ کرتا ہوں۔چیئرمین پی ٹی آئی نے کہا کہ ہم نے اعلان تو کیا تھا کہ الیکشن کے اعلان تک اسلام آباد میں بیٹھیں گے لیکن گزشتہ 24 گھنٹوں میں دیکھا کہ یہ لوگ ملک کو انتشار کی جانب لے کر جا رہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ میں یہاں بیٹھ گیا تو یہ لوگ تو خوش ہوں گے کیونکہ یہ لوگ فوج اور پولیس سے ہماری لڑائی کروانا چاہتے ہیں لیکن یہ پولیس بھی ہماری ہے، فوج بھی ہماری ہے اور عوام بھی ہمارے ہیں، ہم ملک کو تقسیم کرنے نہیں آئے بلکہ قوم کو بنانے کے لیے آئے ہیں۔عمران خان نے کہا کہ امپورٹڈ حکومت کو پیغام ہے کہ 6 روز میں انتخابات کا اعلان کریں، 6 روز میں فیصلہ نہ کیا تو ساری قوم کو لے کر واپس اسلام آباد آؤں گا، جون میں الیکشن کا اعلان کریں اور اسمبلی تحلیل کریں، اعلان نہ کیا تو 20 لاکھ لوگ اسلام آباد میں اکھٹا کریں گے۔دوسری جانب اسلام آباد پولیس کے مطابق عمران خان کے خطاب کے بعد پی ٹی آئی کے مظاہرین ریڈ زون کے اندر داخل ہوگئے، ترجمان اسلام آباد پولیس نے بتایا کہ پولیس، رینجرز اور دیگر قانون نافذ کرنے والے اداروں نے انہیں بڑے تحمل سے روکا۔ترجمان اسلام آباد پولیس کا کہنا تھا کہ آئی جی اسلام آباد ڈاکٹر اکبر ناصر خان بھی خود موقع پر موجود ہیں، تمام مظاہرین کو ریڈ زون سے باہر جانے کی ہدایت کی جارہی ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.