ہمیں صرف ایک ڈر ہے ورنہ روس سے سستا تیل خریدنے کو تیار ہیں ۔۔۔۔وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل کا اہم بیان سامنے آگیا

کراچی (ویب ڈیسک) وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل نے کہا ہے کہ اگر روس سے تیل کی پیشکش کی جاتی ہے اور اگر اس طرح کے معاہدے پر کوئی پابندیاں عائد نہیں کی جاتی ہیں تو پاکستان سستی قیمت پر تیل خریدنے کیلئے تیار ہے، روس اس وقت پابندیوں کی زد میں ہے لہٰذا ہمارے لیے وہاں سے

تیل خریدنے کا تصور کرنا بہت مشکل ہے۔ امریکی نشریاتی ادارے کو انٹرویو میں جب ان سے سوال کیا گیا کہ کیا پاکستان، بھارت کی طرح سستا روسی تیل خریدنے کیلئے تیار ہے تو وزیر خزانہ نے کہا کہ وہ اس پر ’ضرور غور‘ کرینگے۔ تاہم، مفتاح اسماعیل نے کہا کہ انکے خیال میں پاکستانی بینکوں کیلئے روسی تیل خریدنے کے لیے انتظامات کرنا ممکن نہیں اور ساتھ ساتھ یہ دعویٰ بھی کیا کہ روس نے ویسے بھی پاکستان کو رعایتی نرخ پر ایسی کسی بھی خریداری کی پیشکش نہیں کی ہے۔ انہوں نے سی این این کی اینکر کو بتایا کہ پچھلی حکومت نے روس سے تیل خریدنے کی بات کی تھی لیکن میرے خیال میں روس پابندیوں کی زد میں ہے اور انہوں نے پچھلی حکومت کی جانب سے لکھے گئے خط کا کوئی جواب نہیں دیا ہے۔ مفتاح اسماعیل نے کہا کہ روس پر عائد موجودہ امریکی پابندیاں دوسرے ممالک کو روسی تیل خریدنے سے نہیں روکتیں البتہ بائیڈن انتظامیہ کے حکام نے کچھ ثانوی پابندیوں پر غور کیا ہے جو مستقبل میں ان خریداریوں کو محدود کر سکتی ہیں۔ دریں اثنا درآمد شدہ گندم کے موضوع پر اسماعیل نے کہا کہ پاکستان نے یوکرین اور روس دونوں سے پوچھا ہے اور جو بھی ملک بیچنے کیلئے تیار ہو گا، اس سے ’خریدنے میں خوشی‘ محسوس کرینگے۔ پاکستان کی تیل کی درآمدات کو زرمبادلہ کی رکاوٹوں کا سامنا ہے، پاکستان کی تیل کی صنعت کو خام اور تیل کی مصنوعات کی درآمد کے لیے بین الاقوامی مالیات کا بندوبست کرنے میں چیلنجز کا سامنا ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.