پہلے پابندی پھر نرمی،حکومت نے مختلف اشیاء کو درآمد کرنے کی اجازت دے دی،کون کون سے اشیاء منگوئی جا سکیں گی؟؟

اسلام آباد(ویب ڈیسک) وفاقی حکومت نے درآمد اشیاء پر عائد پابندی میں نرمی کردی۔ وزارت تجارت نے درآمدی اشیاء میں نرمی کا نوٹیفکیشن جاری کردیا جس کے مطابق صنعتی شعبے کیلئے درآمد کردہ خام مال پر پابندی عائد نہیں ہوگی اور انٹرمیڈیٹ گڈز کی درآمد پر بھی پابندی نہیں ہوگی۔ نوٹیفکیشن میں بتایا گیا ہےکہ 19مئی کو درآمدی

اشیاء پر عائد پابندی کی لسٹ میں خام مال، مشینری اور آلات بھی شامل تھے تاہم اب صنعتی آلات، مشینری اور فارن گرانٹ کے تحت چلنے والے منصوبوں کے مٹیریل کی درآمد پر پابندی عائد نہیں ہوگی۔ حکومت نے ملک کی تیزی سے بگڑتی ہوئی معیشت کو سہارا دینے کیلئے معاشی ایمرجنسی کی بنیاد پر لگژری غیر ملکی اشیاء کی امپورٹ پر مکمل پابندی عائد کی ہے۔ حکومت نے جن اشیاء پر پابندی عائد کی ان میں موبائل فونز، ہوم اپلائنسز، فروٹس اور ڈرائی فروٹس(ماسوائے افغانستان سے)، کراکری، پرائیوٹ اسلحہ، جوتے، فانوس اور لائٹیں ، (ماسوائے انرجی سیورز)، ہیڈ فونز اور لاؤڈ اسپیکرز، ساسز ، کیچپ، دروازے اور کھڑکیوں کے فریمز اور دیگر امپورٹڈ آئٹمز شامل ہیں۔دوسری طرف ) ملک بھر میں یوٹیلیٹی اسٹورز پرگھی اورکوکنگ آئل مہنگا کردیا گیا۔ یوٹیلیٹی اسٹورزپرمختلف برانڈزکےگھی اورکوکنگ آئل کی قیمتوں میں کئی گنا اضافہ کیا گیا ہے، یوٹیلیٹی اسٹورز کارپوریشن نے قیمتوں میں اضافےکا نوٹیفکیشن بھی جاری کردیا ہے۔ نوٹیفکیشن کے مطابق ایک کلوگھی کی قیمت میں 208 روپےتک اضافہ کیا گیا ہے جس کے بعد یوٹیلیٹی اسٹورزپرمختلف برانڈز کےگھی کی فی کلو قیمت 555 روپے تک پہنچ گئی ہے۔ مختلف برانڈز کےکوکنگ آئل کی فی لیٹر قیمت میں 213 روپے تک اضافہ کیا گیا ہے جس کے بعد یوٹیلیٹی اسٹورز پرکوکنگ آئل کی فی لیٹر قیمت 605 روپے تک پہنچ گئی ہے۔ یوٹیلیٹی اسٹورز کارپوریشن کی جانب سے جاری نوٹیفکیشن کے مطابق کوکنگ آئل اور گھی کی نئی قیمتوں کا اطلاق یکم جون سے ہوگا۔دوسری طرف وفاقی حکومت نے کھاد کی قیمت میں کمی کا نوٹیفکیشن واپس لے لیا۔ اعلامیے کے مطابق کھاد کی قیمت مقررکرنے کا نوٹیفکیشن واپس لینے کا اطلاق فوری ہوگا اور کھاد کی قیمت مقرر کرنے کا نوٹیفکیشن واپس لینے کیلئے ایس آر او جاری کردیا۔ اعلامیے کا کہنا ہے کہ کھاد کے 50 کلو تھیلے کی ریٹیل قیمت 1768روپے مقرر کی گئی تھی جس کا اطلاق فوری طور پر اور 7 جولائی 2022 تک کیا گیا تھا

Leave a Reply

Your email address will not be published.