پاکستانیو!پُرانے پاکستان میں مزہ آرہا ہے؟ پٹرول، بجلی کے بعد گیس کی قیمتوں میں 600 فیصد تک اضافے کا امکان

لاہور( نیوز ڈیسک )آئل اینڈ گیس ریگولیٹری اتھارٹی نے حکومت سے کہا ہے کہ کیٹیگریز اور شعبوں سے قطع نظر تمام صارفین پر گیس کے یکساں نرخوں کا اطلاق کیا جائے تاکہ گیس کی حقیقی قیمت کی وصولی کو یقینی بنایا جا سکے اور گیس کے شعبے کا گردشی قرضہ ختم کیا جا سکے۔ میڈیا رپورٹ کے مطابق اگر وفاقی حکومت گیس کی آمدنی کی ضروریات کو پورا کرنے کے لیے ریگولیٹر کے مشورے کو قبول کرتی ہے تو اوگرا کے دو الگ

الگ طریقوں سے کیے گئے تعین کے مطابق گھریلو اور خصوصی کمرشل سیکٹر جیسے تندور وغیرہ کے کم استعمال والے زمروں کے صارفین کے لیے نرخ جولائی میں 600 فیصد سے زیادہ بڑھ جائیں گے۔اوگرا نے گزشتہ ہفتے گیس فراہم کرنے کی والی کمپنیوں کے محصولات کی ضروریات کے بارے میں لکھا تھا کہ صارفین کی تمام کیٹیگریز کو کم از کم توانائی کے متبادل یا متبادل ذرائع کی موجودہ قیمت کو مدنظر رکھتے ہوئے سروس کی اوسط قیمت ادا کرنی چاہیے، اس کے نتیجے میں کوئی وجہ نہیں ہو گی کہ آمدنی کی ضرورت کو پورا کیا جا سکے، یہ تمام متعلقہ افراد کو یکساں مواقع فراہم کرے گا اور ریونیو شارٹ فال کی صورت حال سے بچ جا سکے گا۔اوگرا نے مالی سال 23-2022 کے لیے کیٹیگری کے لحاظ سے مقرر کردہ قیمتیں بھی بھیج دی ہیں، اس عزم کے تحت ریگولیٹر نے تمام صارفین سے ان کے شعبوں اور موجودہ سلیب سے قطع نظر 854.52 روپے فی یونٹ کی مساوی شرح وصول کرنے کی بھی سفارش کی ہے۔اس طرح سب سے کم سلیب میں گھریلو صارفین (لائف لائن صارفین )کو 0.5 کیوبک میٹر تک کی کھپت کے لیے 121 روپے فی یونٹ کی موجودہ ماہانہ شرح کے مقابلے میں دیئے جا رہے ہیں۔ دوسری جانب حکومتی سخت اقدامات کے باوجود امریکی ڈالر کی قیمت میں مزید اضافہ ہو گیا ۔ تفصیلات کے مطابق رواں ہفتے کے دوسرے کاروباری روز کے آغاز پر ہی انٹر بینک میں ڈالر مزید 94پیسے مہنگا ہو گیا جس کے بعد 201پر ٹریڈ کر رہا ہے ۔یاد رہے کہ گزشتہ روز انٹر بینک اور اوپن مارکیٹ میں ایک بار پھر روپے کے مقابلے ڈالر200روپے سے تجاوز کر گیا جس کی وجہ سے روپے کی قدر میں 2.50روپے تک کمی واقع ہوئی ہے۔فاریکس ایسوسی ایشن آف پاکستان کی رپورٹ کے مطابق پیر کو ایک بار پھر ڈالر کے سامنے پاکستانی پرویہ دباؤ کا شکار ہو گیا۔انٹر بینک میں روپے کے مقابلے ڈالر2.55روپے مہنگا ہو گیا جس سے ڈالر کی قیمت خرید 198.15روپے سے بڑھ کر200.40روپے اور قیمت فروخت 198.25روپے سے بڑھ کر200.80روپے ہو گئی اسی طرح مقامی اوپن کرنسی مارکیٹ میں 2.50روپے کے اضافے سے ڈالر کی قیمت خرید 197.50روپے سے بڑھ کر200روپے اور قیمت فروخت198.50روپے سے بڑھ کر201روپے کی بلند سطح پر جا پہنچی۔فاریکس رپورٹ کے مطابق پیر کو یورو کی قدر میں بھی2.50روپے کا اضافہ ہوا جس کے بعد یورو کی قیمت خرید 210.50روپے سے بڑھ کر213روپے اور قیمت فروخت212.50روپے سے بڑھ کر215روپے ہو گئی اسی طرح 4روپے کے اضافے سے برطانوی پونڈ کی قیمت خرید 245.50روپے سے بڑھ کر250روپے اور قیمت فروخت 248.50روپے سے بڑھ کر252.50روپے ہو گئی۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.