شہباز شریف کے خلاف منی لانڈرنگ کیس: ایف آئی اے پراسیکیویٹر اچانک بے ہوش، وجہ کیا بنی ؟ جانیے

لاہور: (ویب ڈیسک) وزیراعظم شہباز شریف اور وزیراعلیٰ پنجاب حمزہ شہباز کے خلاف منی لانڈرنگ کیس میں ایف آئی اے کے سپیشل پراسیکیوٹر فاروق باجوہ کی طبیعت ناساز ہوگئی۔ ایف آئی اے کے اسپیشل پراسیکیوٹر فاروق باجوہ آج بینکنگ جرائم کورٹ میں پیش ہوئے تھے، فاروق باجوہ کی عدالت کے اندر طبیعیت خراب ہوئی اور بے ہوش ہوگئے۔

فاروق باجوہ کو سروسز اسپتال منتقل کیا گیا، ڈاکٹر فاروق باجوہ کا طبی معائنہ کیا جا رہا ہے۔ فاروق باجوہ وزیر اعظم اور وزیر اعلیٰ کے خلاف کیس میں ایف آئی اے کی نمائندگی کرتے ہیں۔ دوسری جانب ٹیکس وصولیوں کا ہدف 7004 ارب مختص: وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل کی بجٹ تقریر کے مطابق بجٹ میں نان ٹیکس ریونیو 2 ہزار ارب روپے ہوگا، ٹیکس آمدن کا ہدف 7004 ارب روپے ہے، این ایف سی ایوارڈ کے تحت صوبوں کو 4 ہزار 1 سو ارب روپے ملیں گے، پاکستان بیت المال کے لیے 6 ارب روپے کا بجٹ مختص کیا گیا ہے۔ اسپتال پر ٹیکس چھوٹ: بجٹ تقریر کے مطابق ٹیکس تنازعات ترجیحی بنیادوں پر حل کیے جائیں گے، خیراتی ہسپتال اگر پچاس بیڈز سے زیادہ کا ہوگا تو مکمل ٹیکس چھوٹ دی جائے گی۔زرعی آلات اور اجناس پر عائد سیلز ٹیکس ختم: خوردنی تیل کی مقامی پیداوار بڑھانے کے لیے انقلابی اقدامات کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ ٹریکٹرز، زرعی آلات، گندم، مکئی، کینولا، سورج مکھی اور چاول سمیت مختلف اجناس کے بیجوں کی سپلائی پر سیلز ٹیکس واپس لینے کی تجویز ہے۔سولر پینل کی درآمد پر سیلز ٹیکس ختم: وزیر خزانہ کے مطابق توانائی کی قلت دور کرنے کے لیے رعائتیں دی جارہی ہیں، سولر پینل کی درآمد اور مقامی سپلائی پر سیلز ٹیکس ختم کرنے کا اعلان کردیا گیا ہے۔ 200 یونٹ سے کم بجلی استعمال کرنے والوں کو سولر پینل کی خریداری کے لیے بینکوں سے آسان اقساط پر قرضے دیے جائیں گے۔ایک لاکھ ماہانہ تنخواہ تک ٹیکس ختم:بجٹ تقریر کے مطابق تنخواہ دار طبقے کے لیے ٹیکس چھوٹ کی حد 6 لاکھ سے بڑھا کر 12 لاکھ کر دی گئی ہے۔ کاروباری افراد اور ایسوسی ایشن آف پرسنز کے لیے ٹیکس چھوٹ کی حد 4 لاکھ سے بڑھا کر 6 لاکھ کر دی گئی۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.