چار صوبائی ضمنی انتخابات: تحریک انصاف کو الیکنش سے پہلے ہی بڑی کامیابی مل گئی

لاہور (ویب ڈیسک ) چار صوبائی نشستوں پر ضمنی انتخاب ہونے جا رہا ہے جس سلسلے میں پی پی 158 میں ن لیگ کے امیدوار مہر اشتیاق کے کاغذات نامزدگی مسترد کر دیئے گئے ہیں ۔ تفصیلات کے مطابق آر او نے تحریک انصاف کے جاوید اقبال کے اعتراضات منظور کر لیے ہیں،

مہر اشتیاق نے تاخیر سے کاغذات نامزدگی جمع کروائے ۔دوسری جانب عوامی مسلم لیگ کے سربراہ اور سابق وفاقی وزیر داخلہ شیخ رشید احمد نے کہا ہے کہ امپورٹڈ حکومت مہنگائی کرنے کے باوجود آئی ایم ایف خوش نہیں کرسکی ۔ تفصیلات کے مطابق سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر جاری کردہ اپنے ایک بیان میں انہوں نے کہا کہ یہ لوگ ملکی معیشت کو تباہ کرنے آئے تھے ، مہنگائی کے خلاف جماعت اسلامی اور عوامی تحریک کے احتجاج کی حمایت کرتا ہوں کیوں کہ شہباز حکومت میں لوگ لوڈشیڈنگ اور مہنگائی سے مر رہے ہیں جب کہ عمران خان کے دورِ حکومت میں غیر ملکی ترسیلات زر اور زرمبادلہ کے انبار لگے تھے لیکن موجودہ حکومت نے سب تباہ کردیا لیکن شہباز شریف کی امپورٹڈ حکومت ملک میں مہنگائی کا سیلاب لانے کے باوجود آئی ایم ایف کو خوش نہیں کرسکی۔ خیا ل رہے کہ 10 جون کو وفاقی حکومت نے آئندہ مالی سال23-2022 کا بجٹ پیش کر دیا تھا ، وفاقی حکومت نے مختلف شعبوں میں ٹیکس کی شرح میں اضافہ کردیا ہے ، وفاقی وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل نے کہا کہ ٹیکس بوجھ امیروں سے غریبوں کی طرف منتقل کردیا ہے، اشرافیہ سے جائیداد، وسائل اور آمدن کے مطابق ٹیکس لیا جائے گا، کمپنیوں کی 300 ملین یا اس سے زائد سالانہ آمدن پر 2 فیصد ٹیکس ادا کرنے کی تجویز ہے، چھوٹے ریٹیلرز کیلئے 3 سے 10ہزار فکسڈ ٹیکس ہوگا۔ وفاقی حکومت نے آئندہ مالی سال23-2022 کا وفاقی بجٹ منظوری کیلئے قومی اسمبلی میں پیش کردیا تھا، وفاقی بجٹ وزیرخزانہ مفتاح اسماعیل نے قومی اسمبلی میں پیش کیا۔ بجٹ کا کل حجم 9 ہزار502 ارب روپے ہے، مجموعی بجٹ خسارہ4 ہزار ارب سے زائد ہے، قرض اور سود کی ادائیگی کیلئے3 ہزار 950 ارب اور ٹیکس وصولیوں کا ہدف 7ہزار 255ارب مقرر کیا گیا ہے، دفاع کیلئے1450ارب رکھے جائیں گے، سرکاری ملازمین کی تنخواہیں15 اور پنشن میں5 فیصد اضافہ کیا گیا ہے۔بجٹ کے اہم اقدامات کے مطابق رواں مالی سال ایف بی آر کے ریونیو 6 ہزار ارب روپے، ٹیکس وصولیوں میں صوبوں کا حصہ 3512 ارب روپے ہوگا، رواں سال وفاق کے زیر انتظام ٹیکس وصولی کا حجم 3803ارب روپے اور وفاقی حکومت کا نان ٹیکس ریونیو1315 ارب روپے رکھا جائے گا، حکومت کے مجموعی اخراجات 9118 ارب روپے ہوں گے۔ رواں مالی سال پی ایس ڈی پی منصوبوں پر 550 ارب روپے خرچ ہوں گے، دفاع پر 1450ارب روپے خرچ ہوں گے، وفاقی حکومت کے اخراجات 530 ارب روپے مختص، پنشن پر 525 ارب روپے، سبسڈی پر1515 ارب، ایڈ اینڈ گرانٹس کی مد میں 1090ارب روپے خرچ کئے جا چکے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.