نواز شریف کی لندن روانگی سے قبل عمران خان کی جانب سے خصوصی پیغام بھیجے جانے کا انکشاف

کراچی(ویب ڈیسک)نجی ٹی وی چینل کے پروگرام ”ایک دن جیو کے ساتھ“میں میزبان سہیل وڑائچ کے ساتھ گفتگو کرتے ہوئے معاون خصوصی وزیراعظم برائے صحت فیصل سلطان نے کہا کہ نواز شریف کی طرف میرا وزٹ تیمارداری کی مد میں تھا۔خان صاحب نے کہا کہ تمہیں حال پوچھنے جانا چاہئے میاں صاحب میرا حال بھی پوچھنے آئے

تھے ۔میں نے کہا ٹھیک ہے جی چلا جاؤں گا۔میرے وزٹ کی تمام تر نوعیت وہ ایک تیمار دار یا ان کی مزاج پرسی کے حوالے سے تھی میڈیکل کے حوالے سے قطعاً نہیں تھی۔صرف ایک میرے کہنے سے کہ وہ واقعی بیمار ہیں یا نہیں ہیں بات اتنی متعلقہ نہیں تھی۔ شہر کے بہت مستند ڈاکٹروں کی کمیٹی بیٹھی اپنی رائے دے چکی تھی ۔میں نے بتایا کہ وہ وہاں داخل ہیں میں ان تک گیا ہوں ان تک آپ کا پیغام پہنچایا صحت یابی کے لئے آپ کی نیک تمنائیں پہنچائیں ۔اس کے جواب میں انہوں نے شکریہ اور نیک تمنائیں دیں وہ میں نے ان تک پہنچا دیں میرا رول اتنا تھا۔سرکاری ہسپتالوں کو بہتر کرنے کے لئے یہ ضروری ہے کہ گورن کرنے والوں کے پاس یہ حق ہونا چاہئے کہ بنچ مارکس کا تعین کرسکیں اور مینجمنٹ کو اس کے اوپر پابند کرسکیں ۔ان کا کہنا تھا کہ نجی شعبے میں فیصلہ سازی ایک تیز لوپ ہے جلدی ہوجاتی ہے۔ سرکاری سسٹم بڑے ہیں اس میں چیک اینڈ بیلنس وہ بہت بلڈہوگئے ہیں ان کو عبور کرنے میں وقت لگتا ہے۔اس میں اسٹیک ہولڈرز بہت زیادہ ہیں حکومت، عوام اور اپوزیشن ہیں تمام فیصلے مختلف راستوں سے گزرنے کے بعد ہوتے ہیں۔نجی شعبہ والا کام زیادہ ہموار تھا سرکاری شعبے میں چیلنجز زیادہ ہیں۔نجی شعبے میں تنخواہ بہت زیادہ ہے سرکاری شعبے سے اس کا موازنہ نہیں ہے ۔ میں تنخواہ نہیں لے رہا اعزازی طور پر کام کررہا ہوں۔پاکستان میں ہم بہت مشکل امتحانات پاس کرتے ہیں۔ہمارا جو لوکل ٹریننگ سسٹم ہے جیسے پوسٹ گریجویٹ ٹریننگ ہے وہ بہت مشکل ہے آسان نہیں ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.