کنٹریکٹ ملازمین کو ریگو لر کرنے کے حوالے سے لاہور ہائیکورٹ نے بڑا حکم جاری کردیا

لاہور (ویب ڈیسک) لاہور ہائیکورٹ کے جج جسٹس محمد شان گل نے قرار دیا کہ ریگولرائزیشن آف سروس ایکٹ ازخود عمل میں آنیوالا قانون ہے، جب کنٹریکٹ ملازم قانون کے تحت ریگولر ہونے کا حقدار ہو جائے تو اس حق کیلئے مزید کسی قانونی عمل کی ضرورت نہیں۔ جسٹس محمد شان گل نے محمد عمر خالد کی بحالی کی

درخواست مسترد کرتے ہوئے اپنے فیصلے کو عدالتی نظیر بھی قرار دیا ہے، فیصلے کے مطابق درخواستگزار دلچسپ انداز میں بلاواسطہ وہ مقصد حاصل کرنا چاہتا ہے جو وہ براہ راست حاصل نہیں کر سکتا تھا درخواستگزار ریگولر کرنے کی آڑ میں چاہتا تھا کہ عدالت اسے نوکری پر بحال کرنے کا حکم دے، محکمے نے درخواستگزار کو نہ صرف 2 بار سنا بلکہ الزامات کے جواب دینے کے بھی مواقع فراہم کیے، درخواستگزار اپنے خلاف محکمانہ انکوائری میں الزامات کا دفاع کرنے میں ناکام رہا، نوکری پر بحالی کی استدعا تو منظور نہیں کی جا سکتی، البتہ محکمانہ کارروائی کے زیر اثر رہے بغیر محکمہ صحت درخواستگزار کو ریگولر کرنے پر غور کرے، محکمہ صحت درخواستگزار کیخلاف محکمانہ انکوائری کے عنصر کے زیر اثر رہے بغیر ریگولر کرنے کے معاملے پر غور کرے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.