قومی سلامتی کے اجلاس میں بلاول بھٹو نے قمر جاوید باجوہ کو درخواست کی تو آگے سے کیا جواب ملا ؟

اسلام آباد (ویب ڈیسک )پارلیمانی کمیٹی برائے قومی سلامتی کے اجلاس کی اندرونی کہانی سامنے آ گئی ہے جس دوران آرمی چیف نے بلاول بھٹو کے علی وزیر کو معاف کرنے کے معاملے پر کہا کہ اس کیلئے علی وزیر کو معافی مانگنی ہو گی میرے خلاف نوازشریف اور ایاز صادق نے بات کی ،

ذات پر بات کرنا اور بات ہے لیکن پاک فوج کے خلاف بات کرنا اور بات ہے ۔تفصیلات کے مطابق اجلاس کے دوران مشاہد حسین نے آرمی چیف سے مکالمہ کرتے ہوئے کہا کہ ” مسلم لیگ ن پر ہاتھ ہلکا رکھیں جس پر آرمی چیف نے مسکراتے ہوئے جواب دیا کہ ’ فواد چوہدری بھی ساتھ ہی کھڑے ہیں آپ کے ۔‘ اجلاس میں آرمی چیف نے رہنما (ن) لیگ احسن اقبال سے مکالمہ کرتے ہوئے کہا کہ آپ کے بیٹے سے نیشنل ڈیفنس یونیورسٹی میں ملا تھا۔ذرائع کے مطابق کھانے کی میز پر رانا ثناء اللہ اور رانا تنویر بھی آگئے تو جنرل باجوہ نے کہا میری تو بیوی بھی راجپوت ہے ، اس کے علاوہ پاکستان کی فوج میں 40 فیصد پشتون ہیں، ہم سب کو ساتھ لے کر چلتے ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.