بیت اللہ کی چابی آج جس عرب قبیلے کے پاس ہے اسکے بارے میں حضرت محمد ؐ نے 1400 سال پہلے کیا پیشگوئی کی تھی ؟

دارالعلوم دیو بند کے دوسرے مہتمم گزرے ہیں، ان کا نام رفیع الدین تھا، بڑے صاحب حال اور صاحب کشف و کرامت بزرگ تھے، حرم تشریف لائے اور یہاں قیام کیا، اب ذرا سوچئے کہ ان کی سوچ کہاں پہنچی، ایک دن بیٹھے بیٹھے خیال آیا کہ نبی علیہ السلام نے بیت اللہ کی

کنجی بنو شیبہ کو عطا کی تھی،یہ ایک قبیلہ ہے جن کے پاس پہلے سے یہ کنجی تھی،نبیؐ نے فتح مکہ کے بعد کنجی انہی کو دے دی اور فرما دیا کہ یہ کنجی قیامت تک تمہارے ہی قبیلہ میں رہے گی،یہ تصدیق بھی فرما دی، چنانچہ آج بھی بیت اللہ کی کنجی ان کے پاس ہے، اگر کوئی بادشاہ بھی آتا ہے تو دروازہ کھولنے کے لیے وہی خاندان بنو شیبہ کا بندہ آتا ہے اور وہ کنجی بردار دروازہ کھولتا ہے،

Leave a Reply

Your email address will not be published.