کشمیری رہنما پھٹ پڑے

بریڈفورڈ(ویب ڈیسک)آزادکشمیر میں وزیراعظم عمران خان کی جانب سے سردار عبدالقیوم نیازی کو نامزد کیے جانے پر کمیونٹی نے ملے جلے ردعمل کا اظہار کیا ہے تحریک انصاف یارکشائر کے سابق صدر خواجہ طاہر ایوب نے کہا کہ آزادکشمیر میں دوسرا بزدار لانے سے مسئلہ کشمیر آزادکشمیر میں کارکنان اور پارٹی قیادت کے مورال اور اعتماد کو ٹھیس

پہنچی ہے،اس تقرری سے برادری ازم کی بو بھی آتی ہے۔ چوہدری غالب رضا ایڈووکیٹ کا کہنا تھاکہ وہ اپنے قائد بیرسٹر سلطان محمود چوہدری کے ہر فیصلے پر لبیک کہتے ہیں اور ان کے ساتھ چٹان کے ساتھ کھڑے ہیں ۔مسلم ایسوسی ایشن کیتھلے کے جوائنٹ سیکرٹری الحاج علی اکبر چشتی نے کہا کہ بیرسٹر سلطان محمود ایک سینئر رہنما ہیں جنہوں نے اپنی ساری زندگی تحریک کشمیر کے لیے وقف کر رکھی ہے عالمی سطح پر انہوں نےمسئلہ کشمیر اجاگر کرنے میں اہم کردار ادا کیا ہے جس طرح عمران خان پارٹی کے سربراہ کی حیثیت سے ملک کے وزیراعظم بنے اسی طرح بیرسٹر سلطان محمود کو بھی حق ملنا چائیے تھا عمران خان کا کہنا کہ کشمیر کے فیصلے کشمیر میں ہوں گے حالیہ صورت حال اس کے منافی ہے اس پار اور دنیا کو کوئی اچھا پیغام نہیں گیا، بیرسٹر سلطان محمود چوہدری کو اگر وزیراعظم بنایا جاتا تو عالمی سطح پر تحریک کشمیر کو مزید تقویت ملتی ۔پاکستان تحریک انصاف ڈیوزبری کے صدر چوہدری محمد فاضل نے کہا کہ جس طرح آزاد کشمیر تحریک انصاف کو نظر انداز کر کے وزیراعظم کا فیصلہ کیا گیا ہے اس سے پوری کشمیری قوم کے سر شرم سے جھک گئے ہیں ،خطہ کشمیر ایک متنازع علاقہ ہے اس طرح کا ڈرامہ تحریک آزادی کشمیر کو متاثر کرتا ہے دنیا میں ہر جگہ پارٹی کا سربراہ ہی حکومت بناتا ہے پاکستان کے وزیراعظم کا یہ فیصلہ انتہائی افسوسناک ہے جسے تحریک انصاف ہی نہیں بلکہ ہر جماعت غلط کہتی ہے جس سے کشمیریوں کی خودمختاری متاثر ہوئی ہے ۔ دریں اثناہیلی فیکس سے وزیراعظم پاکستان عمران خان کی طرف سے آزادکشمیر کے لئے وزیراعظم سردار عبدالقیوم کو نامزد کرنے پر کشمیری کمیونٹی کی جانب سے شدید ردعمل سامنے آیا ہے، کشمیری رہنماؤں نے وزیراعظم عمران خان کے اس فیصلے پر شدید تنقید کرتے ہوئے اسے میرٹ کی دھجیاں اڑانا قرار دیا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.