افغان کرکٹ ٹیم کے ساتھ کیا سلوک کیا جائیگا ؟

کابل (ویب ڈیسک)دوحہ میں افغان تالبان کے ترجمان سہیل شاہین نے کہا ہے کہ تالبان ہی افغانستان میں کرکٹ لیکرآئے تھے اور اب اگر وہ برسراقتدار آئے تو افغانستان میں کرکٹ جاری رہے گی اور موجودہ ٹیم برقرار رہے گی۔ سہیل شاہین نے کہا کہ ’کرکٹ جاری رہے گی اور جو بھی ہم سے ہو سکے تو کرکٹ میں مزید بہتری لائیں گے۔

جس وقت ہم برسراقتدار تھے تو کرکٹ کو ہم نے ہی متعارف کروایا تھا۔مجھے یاد ہے جب میں اسلام آباد تھا تو میں اور ضعیف صاحب ٹیسٹ میچ دیکھنے گئے تھے،میچ دیکھنے کا وہ ایک اچھا تجربہ تھا ۔ہم خوش تھے ۔ہمارے کھلاڑیوں نے وہاں میچ کھیلاتھا۔ وہ ایک شاندار میچ تھا۔یاد رہے کہ افغانستان میں تالبان کے پچھلے دور حکومت میں سہیل شاہین پاکستان میں ڈپٹی سفیر اور ملا عبدالسلام ضعیف سفیر تھے۔ افغانستان کرکٹ بورڈ سے منسلک عہدیدار نے کہا کہ وہ سیاسی امور پر رائے نہیں دے سکتے۔ اس لیے نام شائع نہ کرنے کی شرط پر انہوں نے بتایا کہ عمومی خیال کے برعکس افغانستان میں کرکٹ سے منسلک لوگ تالبان کے قبضے کی صورت میں کرکٹ کے مستقبل کے بارے میں زیادہ پریشان نہیں ہیں کیونکہ سب کو پتا ہے کہ تالبان کرکٹ کے شیدائی ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.